Official Web

غربت کے خلاف جنگ میں حتمی فتح سے جشن بہار کی حقیقی خوشیوں کا حصول

چینی ثقافت میں جشن بہار اپنی اہمیت کے لحاظ سے سب سے بڑا تہوار کہلاتا ہے ،یہ خاندانوں کے ملاپ کا موقع ہوتا ہے جس میں ملک کے مختلف حصوں میں روزگار کے سلسلے میں مقیم افراد کی کوشش ہوتی ہے کہ وہ جشن کی خوشیاں اپنے گھر والوں کے ساتھ منائیں۔ جشن بہار کی مناسبت سے ملک گیر مختلف رنگا رنگ سرگرمیوں کا انعقاد کیا جاتا ہے جن میں چینی باشندے بھرپور طور پر شریک ہوتے ہوئے اس تہوار کی خوشیوں سے بھرپور لطف اٹھاتے ہیں۔

 جشن بہار کے موقع پر چین کی اعلیٰ قیادت بھی اپنے عوام کے ساتھ  گھل مل کر ان خوشیوں کو مناتی ہے اور  عوام دوست رویوں کا عملی نمونہ دیکھا جا سکتا ہے۔اسی روایت کو برقرار رکھتے ہوئے چینی صدر شی جن پھنگ نے جشن بہار سے قبل صوبہ گیوئی جو کا دورہ کیا اور  مقامی باشندوں سے اُن کے حالات زندگی دریافت کیے۔حالیہ برسوں میں یہ دیکھا گیا ہے کہ چینی صدر نے مختلف صوبوں میں شہری تعمیر و ترقی کا جائزہ لینے کے ساتھ ساتھ تواتر سے دیہی علاقوں یا گاوں کے دورے کیے ہیں تاکہ نچلی سطح پر عوام کو درپیش مسائل کا خود مشاہدہ کیا جا سکے اور غیر رسمی طور پر دیہی باشندوں سے تبادلہ خیال کیا جا سکے۔انہوں نے صوبہ گیوئی جو  میں بھی میاو قومیت کے ایک گاوں کا دورہ کیا ،جشن بہار کی مناسبت سے منعقدہ ثقافتی سرگرمیوں میں شریک افراد کے ساتھ تبادلہ خیال کیا اور ملک میں بسنے والی تمام اقلیتوں کے لیے جشن بہار کے موقع پر نیک تمناوں کا اظہار کیا۔انہوں نے  بی جیے شہر میں دریائے وو جیانگکے لیو چھونگ سیکشن کے حیاتیاتی ماحول کا  جائزہ بھیلیا۔یہ شہر ماضی میں چین کا ایک پسماندہ ترین علاقہ کہلاتا تھا لیکن مرکزی حکومت اور دیگر ریاستی اداروں کےتعاون سے اس شہر میں قابل کاشت رقبے کو بڑھاتے ہوئے بنجر پہاڑوں کو  سبزے میں تبدیل کیا گیا ، بعد میں دیہی باشندوں نے ماہرین کی رہنمائی میں  زراعت ،افزائشی صنعت اور دیہی سیاحت کو فروغ دینا شروعکیا۔ بی جیے شہر نے مشکلات پر قابو پاتے ہوئے فطرت سے ہم آہنگ ترقی کی اور  غربت کی لکیر سے باہر نکلنےمیں کامیابی حاصل کی۔یہی وجہ ہے کہ صدر شی جن پھنگ نے بی جیے کی کامیابی کی کہانی کوچین کی انسدادغربت مہم کا نمونہقرار دیا ہے۔

چینی صدر نے ایک ایسے موقع پر صوبہ گیوئی جو کا دورہ کیا ہے جب یہاں کے عوام غربت کو  مکمل طور پر شکست دیتے ہوئے ترقی و خوشحالی کی راہ پر گامزن ہیں۔یہ بات قابل زکر ہے کہ گیوئی جو کا شمار غریب آبادی کے لحاظ سے چین کے سب سے بڑے صوبے میں کیا جاتا تھا  مگر حکومت کی بہترین پالیسیوں اور انسداد غربت کی کٹھن جدوجہد کی بدولت 2012 سے اب تک 9 ملین سےزائد افراد کو غربت سے باہر نکالا گیا ہے جبکہ سال 2020میں گیوئی جو کی جی ڈی پی 1.78 ٹریلین یوآن (276 بلین امریکی ڈالرز) تک پہنچ چکی ہے۔اس صوبے کا 92.5 فیصد رقبہ پہاڑی علاقوں پر مشتمل ہے اور  یہ چین کا واحد صوبہ ہے جہاں ہموار میدانی علاقہ نہیں ہے۔ گرم مرطوب آب و ہوا کے ساتھ ساتھ بارش کے وافر پانیکی بدولت یہ علاقہ ایک منفرد ماحولیاتی نظام کا حامل ہے۔اسی طرح سیاحت کے مواقع ،یہاں کی مقامی ثقافت اور ترقیاتی امکانات اسے کئی اعتبار سے دیگر علاقوں سے ممتاز کرتے ہیں۔  

انہی مقامی خصوصیات کے تحت چینی حکومت نے صوبہ گیوئی جو میں انسداد غربت کے لیے موئثر پالیسیاں اپنائیں اور دیہی معیشت کو فروغ دیا گیا۔زرعی شعبے میں جدت لائی گئی ،کسانوں کو قرضے فراہم کیے گئے ، لائیو اسٹاک شعبے کی بہتری سے لوگوں کی آمدن میں اضافہ ہوا ،  انٹرنیٹ ٹیکنالوجی کی بدولت ای کامرس کو فروغ ملا جبکہ مقامی باشندوں کو بنیادی ضروریات زندگی مثلاً تعلیم ،رہائش اور صحت کی معیاری سہولیات میسر آئیں۔

صدر شی جن پھنگ نے صوبہ گیوئی جو کے عوام کے ساتھ جشن بہار کی خوشیوں میں شریک ہوتے ہوئے یہ پیغام دیا ہے کہ اعلیٰ قیادت اپنے عوام سے کس قدر لگاو رکھتی ہے ،  عوام دوست رویے اور عوامی فلاح و بہبود ہی چینی کمیونسٹ پارٹی کی اولین ترجیح ہے اور اسی بنیاد پر  چین کی ترقی کو مزید عروج حاصل ہو گا۔