Official Web

‎وادر بندرگاہ کے اطراف لگے پوسٹر / بل بورڈ پاک چین عوام کی محبت کی عکاسی کرتے ہیں

اسلام آباد()گوادر   بندرگاہ کو پوسٹرز اور بل بورڈز نے گھیر لیا ہے ، جس سے چین پاک عوام کی محبت اور گہرے پیار کی عکاسی ہوتیہے ، گوادر پرو کے مطابق بندرگاہ کے چاروں طرف  لگے پوسٹر اور کچھ بھی  نہیں  لیکن  خوبصورت مناظر     گوادر کے لوگوںکییاد کا ایک حصہ ہیں ۔ رپورٹ میں کہا گیا ہے ، گوادر پورٹ ایک بہت ہی  زیادہ  تعمیری  ایریا نہیں ہے اور  احتیاط سے آس پاسنظر ڈا لیں تو   بہت ساری ناقابلِ تعمیر عمارتوں کی  دیواروں پر  چکن سوپ فا دی سولوالے پوسٹر لگے  ہوئے ہیں۔ ایسا لگتاہے کہ یہ پوسٹر ہر ایک شخص کے گردہیں۔ دیوار پر  پرنٹ   ، بل بورڈ پر پینٹ   ،  تختوں  پر چھپے قدم  ، اور  سڑک کے کنارے پرچھپی ہوئی  اسٹیل ٹیوب ہیں۔ مصنف چن فین آئین نے بتایا کہ انہیں گوادر پورٹ میں 10 سے بھی کم عمارتوں پر 50 پوسٹر اسے ملےجن پر    چکن فار  سول  کے پوسٹر  لگے تھے ۔ ان میں سے کچھ پر  محاورے   ، کچھ پر  اقوال  اور کچھ پر  مزاحیہ  جملے تحریر  ہیں۔ان پوسٹروں  کا  زرا غور  سے  مشاہدہ کر یں  توکوئی گوادر پورٹ کے ساتھ اخلاص ، جذبہ محسوس  کیا جا سکتا۔ کوئی بتا سکتا ہے کہ وہاسے اپنا گھر بنا رہے ہیں اور اس چمکتے ہوئے ستارے کی تعمیر میں کوئی کسر نہیں اٹھا رہے ہیں۔ گوادر پورٹ جانے والی مرکزیسڑک پر واقع سب سے بڑا پوسٹر جس پر  لکھا ہوا ہےپھول ہر انچ  ،براہ مہربانی ملاحظہ کریں  براہ کرم پیار کریں؛ برائے مہربانیجانگ یانمی کی دیکھ بھال کریں “( بزنس سنٹرآف چائنہ کمیونیکیشن کنسٹرکشن کمپنی  ) کے مرکز میں واقع  ہے ۔ گوادر پورٹ سیکیورٹیچوکی 36 پوسٹروں کے ساتھ سب سے زیادہ مقبوضہ مقام ہے۔ پورٹ ہاوس   جہاں  چائنہ اوورسیز پورٹس ہولڈنگ کمپنی پاکستان کاعملہ  عملہ رہتا ہے ویاں  بھی کچھ پوسٹروں سے   ان کی تصویر کشی کی گئی ہے۔ یہاں ایک طویل ترین پوسٹر ہے ، جس  پر  لکھا ہواہے کہاسلام ایک مکمل طرز زندگی ہے۔ گوادر پورٹ کا عملہ جس علاقہ میں رہائش پذیر ہے اسےچائنہ  ٹاونبھی کہا جاتا ہے۔ یہبیڈمنٹن عدالتوں اور منی فٹ بال کے میدان سے لیس ہے۔ ان پوسٹروں نے بندرگاہ کو روشن کیا اور گرم گوادر میں کچھ تازہ دمہوا لائی ۔ وہ مقامی لوگوں کی یادوں کا ایک حصہ ہیں، اور ان کے دماغ میں ہمیشہ رہیں گے۔ مصنف چین کی ہوبی ریڈ کراسسوسائٹی کے ریلیف اینڈ ریسکیو ڈیپارٹمنٹ کے ڈائریکٹر ہیں۔ انہیں گذشتہ ستمبر سے مقامی لوگوں کو طبی امداد فراہم کرنے کے لئےگوادر روانہ کیا گیا تھا۔