Official Web

ترکی کی امریکہ کو تنبیہ، ’شام میں کرد ملیشیا کی پشت پناہی بند کی جائے

ترکی نے امریکہ سے مطالبہ کیا ہے کہ وہ شام میں کرد ملیشیا وائی پی جی کی پشت پناہی بند کرے۔

ترکی کے صدر رجب طیب اردوغان کے ترجمان نے بی بی سی سے بات کرتے ہوئے کہا کہ ترک فوج کو عفرین کے علاقے سے نکالنے کے لیے کرد جنگجو امریکہ کے فراہم کردہ ہتھیار استعمال کر رہے ہیں۔

دوسری جانب امریکی وزیر خارجہ ریکس ٹلرسن نے کہا کہ ان کا ملک ترکی کے ساتھ مل کر شمالی شام کے حوالے سے اس کے سکیورٹی خدشات پر کام کرنے کے لیے تیار ہے۔

انھوں نے کہا کہ امریکہ ترکی کے دہشت گردوں سے دفاع کے حق کو تسلیم کرتا ہے اور اس نے صورتحال کو مستحکم بنانے کے لیے کچھ تجاویز بھی دی ہیں۔

ترکی اس ملیشیا کو دہشت گرد سمجھتا ہے اور اسے کردستان ورکرز پارٹی (پی کے کے ) کی ہی شاخ قرار دیتا ہے جو آزاد کردستان کا مطالبہ کرتے ہیں تاہم وائی پی جی تنظیم سے کسی قسم کے تعلق سے انکاری ہے۔

انقرہ کا موقف ہے کہ چونکہ دولتِ اسلامیہ کے خلاف جنگ ختم ہو چکی ہے اس لیے یہ اتحاد ختم ہونا چاہیے۔

ترک صدر کے ترجمان ابراہیم کالن کا کہنا تھا ’ہم اپنی سرحدوں کے ساتھ شام میں ’پی کے کے‘ کی اسٹیبلشمنٹ برداشت نہیں کر سکتے۔‘

عفرین میں ترک فوج کی کارروائی کے بعد لاکھوں شہری وہاں سے فرار ہو رہے ہیں اور انسانی حقوق کے کارکنوں کا کہنا ہے کہ سنیچر کو شروع ہونے والی اس کارروائی کے بعد سے 70 سے زائد شہری مارے جا چکے ہیں۔

اقوامِ متحدہ کی سلامتی کونسل نے پیر کو ایک خصوصی اجلاس میں ترکی کی شام میں کارروائی کے بارے میں بات تو کی لیکن اس کی مذمت نہیں کی گئی۔

پیر کو ترکی کے وزیر اعظم بن علی یلدرم نے کہا تھا کہ ترکی کی زمینی افواج شام کے شمالی حصے میں داخل ہو گئی ہیں جس کا مقصد سرحدی علاقے سے کرد جنگجوؤں کا انخلا ہے۔

ترکی سے موصول ہونے والی اطلاعات کے مطابق بن علی یلدرم نے کہا کہ اس کارروائی کا مقصد شام کے اندر 30 کلومیٹر گہرا ‘محفوظ زون’ قائم کرنا ہے۔

ترکی شام کے علاقے عفرین سے کرد جنگجوؤں کا انخلا چاہتا ہے جو کہ سنہ 2012 سے کردوں کے کنٹرول میں ہے۔

%d bloggers like this: