Official Web

سنکیانگ کی آبادی سے متعلق امریکہ اور مغرب کے دعوے بد نیتی پر مبنی ہیں، تحقیقی رپورٹ

چارجنوری کو ، سنکیانگ یونیورسٹی کی سرکاری ویب سائٹ نے چینی اسکالرز زریات اسمائیل  اور جانگ یاچھین کی مشترکہ طور پر لکھی گئی ایک تحقیقی رپورٹجاری کی ، جس میں واضح طور پر  سنکیانگ کی آبادی کےحقائق پر روشنی ڈالی گئی ہے    ، اور سنکیانگ میں انسانیحقوق کے امور پر  کچھ مغربی سیاست دانوں اوردانشوروںکے بدنیتی پر مبنی مبہم بیانات اور الزاماتکو مسترد کر دیا گیا ہے۔
جون 2020 میں ، جرمن اسکالر ژینگ گوئین نےسنکیانگ میں چین کا لازمی خاندانی منصوبہ بندی اورجبری نس بندی پروگرامنامی ایک تحقیقی رپورٹ شائعکی ، جس میں بے بنیاد  اعداد و شمار اور  معلومات سےچین کی سنکیانگ پالیسی کو بدنام کرنے کی کوشش کیگئی ۔اس کے بعد امریکی وزیر خارجہ مائیک  پومپیو نےبارہا  ژینگ گوئین کی نام نہاد مذکورہتحقیقی رپورٹکا حوالہ دیتے ہوئے اپنے بیانات کے ذریعے چین کےاندرونی معاملات میں مداخلت کی کوششیں کیں۔
چینی اسکالرز کی مذکورہ تحقیقی کاوشسنکیانگ میں  آبادیکی رپورٹنے اس بات کی نشاندہی کی ہے کہ ژینگگوئین نے اپنی رپورٹ میں  اعداد و شمار کی بہتزیادہ دانستہ غلطیاں کی ہیں ، انہوں نے پیمائش کےیونٹوں کو الجھانے کی کوشش کی ہے، غیر واضح اور مبہم تشریحات کیں اور نام نہاد ذرائع  کے نام سے جھوٹ پرمبنی حقائق پیش کئے ہیں۔اس  رپورٹ میں جن سرکاریدستاویزات  کا ذکر کیا گیا تھا، نہ تو ان  دستاویزاتکے ماخذ  کی نشاندہی کی گئی ہے ،نہ ہی ان دستاویزات کی توثیق اور صداقت کے بارے میں کوئی ثبوت پیش کیا گیاہے۔
سنکیانگ میں آبادی کی رپورٹ کے مطابق ، اعداد و شمار سے پتہ چلتا ہے کہ سنکیانگ کی آبادی کی شرح اموات 1949 میں 20.82 ‰ فیصد تھی جبکہ  2018 میں 4.56 فیصد تک کم ہوچکی ہے ۔ 1978 میں سنکیانگ میں باقاعدہکالجوں اور یونیورسٹیوں میں طلبہ کی تعداد 10،229 تھی۔ 2018 تک یہ تعداد بڑھ  کر  398،751 تک جا پہنچی، جسسے ظاہر ہوتاہے کہ سنکیانگ میں تمام نسلی گروہوں کےلوگوں کو صحت اور تعلیم کے حقوق کی پوری ضمانتدی گئی ہے۔
اس رپورٹ میں امریکی آزاد نیوز ویب سائٹ گرےزون  کےمتعلقہ مضامین کا  حوالہ دیتے ہوئے  کہا گیا ہے کہ ژینگ گوئین 1983 میں امریکی حکومت کے ذریعہ قائم ہونے والی دائیں بازو  کی تنظیمکمیونسٹ متاثرینمیموریل فاؤنڈیشنکے تحت  چین کے معاملے پر نامنہاد سینئر محقق ہیں۔ وہ  امریکی خفیہ ایجنسی کی طرفسے  قائم کردہریسرچ گروپ آف سنکیانگ ایجوکیشناینڈ ٹریننگ سینٹر” کے اہم رکن بھی ہیں۔اس لئے یہ کہاجا سکتا ہے کہ  وہ امریکہ کی حمایت سے چین مخالفریمارکس دینے والے ایک نام نہاد اسکالر ہیں ۔