Official Web

چین پاکستان اقتصادی راہداری منصوبے(سی پیک) کے تحت سکھی کناری پن بجلی منصوبہ مکمل

اسلام آباد:چین پاکستان اقتصادی راہداری منصوبے(سی پیک) کے تحت سکھی کناری پن بجلی منصوبہ مکمل ہوگیا ہے جس سے قومی گرڈ844میگاواٹ بجلی شامل ہوگی۔منگل کوچائنہ انرجی انٹرنیشنل گروپ لمیٹڈ پاکستان برانچ کے مینجنگ ڈائریکٹر،چائنا چیمبر آف کامرس ان پاکستان وانگ ہوئی ہوا نے ’’ اے پی پی ‘‘سے خصوصی گفتگو کرتے ہوئے کہا کہ 2013 میں تعمیر کے آغاز کے بعد سے سی پیک نے نمایاں کامیابیاں حاصل کی ہیں،سی پیک فریم ورک کے تحت منصوبوں میں1.9 ارب ڈالر مالیت کے 884 میگاواٹ سکھی کناری ہائیڈرو پاور پراجیکٹ مکمل ہوچکا ہے ، انرجی چائنہ پاکستان میں مزیدسرمایہ کاری کرنے کے لیے ترجیحی بنیادوں پر اقدامات کر رہی ہے ۔

انہوں نے کہا کہ اب تک سی پیک کے تحت پاکستان کے لئے مجموعی طور پر 25.4 بلین ڈالر کی براہ راست سرمایہ کاری آئی ہے، 236,000 ملازمتیں پیدا ہوئیں، 510 کلومیٹر شاہراہیں، 8،000 میگاواٹ سے زیادہ بجلی اور 886 کلومیٹر نیشنل کور ٹرانسمیشن گرڈ کا اضافہ ہوا ہے۔ انہوں نےکہاکہ گوادر بندرگاہ، نقل و حمل کے بنیادی ڈھانچے، توانائی اور صنعت پر توجہ مرکوز کرتے ہوئے ابتدائی تعاون کی ترتیب سے لے کرترقی، لوگوں کے ذریعہ معاش، جدت ، ماحول دوست اور کھلے پن کے’’سی پیک کےاپ گریڈڈ ورژن‘‘ تک، چین پاکستان اقتصادی راہداری مستقبل میں پاکستان کے لئے یقیناً مزید وسیع تر ترقی کے مواقع فراہم کرےگی۔انہوں نے کہا کہ یہ منصوبہ پاکستان کی توانائی کے تحفظ اور اقتصادی ترقی میں اہم کردار اداکرتا ہے۔ جیسے ہی ہم پروجیکٹ کے اس اہم حصے کا افتتاح کرتے ہیں، ہم ان مشترکہ کوششوں کا بھی جشن مناتے ہیں جو ہمیں اس مقام تک لے آئے ہیں۔ محنتی انجینئرز اور سرشار کارکنوں سے لے کر ہمارے قابل قدر شراکت داروں اور معاونین تک، آپ کی اجتماعی شراکت انمول رہی ہے۔ یہ ٹرانسمیشن لائن صرف ایک تکنیکی کامیابی سے زیادہ ہے۔ یہ ترقی کی علامت ہے اور ایک لچکدار اور قابل اعتماد توانائی کے نیٹ ورک کی تعمیر کے ہمارے عزم کا ثبوت ہے۔انہوں نے کہا کہ مجھے یقین ہے کہ 500KV ڈبل سرکٹ کواڈ بنڈل ٹرانسمیشن لائن ہمارے نیشنل گرڈ کی صلاحیت کو بڑھانے، نیلم جہلم اور 844 میگاواٹ کے سکھی کناری پراجیکٹ کو جوڑ کر بجلی کی مستحکم اور موثر ترسیل کو یقینی بنانے میں اہم کردار ادا کرے گی۔ ٹرانسمیشن کے نقصانات کو نمایاں طور پر کم کرکے اور گرڈ کے استحکام کو تقویت دے کر، ہم بجلی کی زیادہ قابل اعتماد فراہمی کو یقینی بنا رہے ہیں۔

یہ پروجیکٹ گرڈ انفراسٹرکچر کو بہتر بنانے کے لیے ہماری حکمت عملی کا سنگ بنیاد ہے، جو لاکھوں لوگوں کے معیار زندگی کو براہ راست متاثر کرتا ہے اور ضروری خدمات کے مسلسل آپریشن میں معاونت کرتا ہے۔انہوں نے کہا کہ ایک مضبوط اور قابل اعتماد توانائی کی فراہمی معاشی ترقی کی ریڑھ کی ہڈی ہے۔ یہ ٹرانسمیشن لائن سی پیک صنعتی زونز، خصوصی اقتصادی زونز (سیز) اور شہری مراکز کی مدد کرے گی، جو سرمایہ کاری اور ترقی کے لیے سازگار ماحول پیدا کرے گی۔ بجلی کے کارخانوں، کاروباروں اور گھروں کو درکار توانائی فراہم کرکے، ہم پائیدار اقتصادی ترقی کی بنیاد رکھ رہے ہیں۔ قابل اعتماد توانائی کا بنیادی ڈھانچہ مقامی اور غیر ملکی سرمایہ کاری کو راغب کرتا ہے، روزگار کی تخلیق اور معاشی تنوع کو فروغ دیتا ہے۔ انہوں نے کہاکہ سی پیک کے تحت چینی کمپنیوں کے ساتھ تعاون نے ٹیکنالوجی اور مہارت کی منتقلی، مقامی صلاحیت کو بڑھانے اور جدید توانائی کے بنیادی ڈھانچے کو چلانے اور چلانے کی ہماری صلاحیت کو بڑھایا ہے۔انہوں نے کہاکہ میں پاکستان کے توانائی کے شعبے کی ترقی کے لیے چائنا انرجی انجینئرنگ کارپوریشن (سی ای ای سی) کے غیر متزلزل عزم پر بھی زور دینا چاہوں گا۔ سی ای ای سی توانائی کی کفایت کے سفر میں ایک اہم شراکت دار رہا ہے، متعدد منصوبوں میں مہارت، ٹیکنالوجی اور سرمایہ کاری فراہم کرتا ہے۔ انہوں نے کہاکہ سی ای ای سی قابل تجدید اور پائیدار توانائی کی طرف اس کی منتقلی میں پاکستان کی مدد کرنے کے لیے بھی پرعزم ہے۔ اگلے مرحلے میں سوکی کناری ہائیڈرو پاور پراجیکٹ، آزاد پتن اور دیگر قابل تجدید توانائی کے اقدامات جیسے منصوبوں میں سرمایہ کاری کرکے، سی ای ای سی پاکستان کو اپنے کاربن فوٹ پرنٹ کو کم کرنے، صاف توانائی کی طاقت کو بروئے کار لانے اور طویل مدتی توانائی کی پائیداری حاصل کرنے میں مدد کر رہا ہے۔انہوں نے کہاکہ ہمیں یقین ہے کہ پاکستان اپنے توانائی کے چیلنجوں پر قابو پالے گا اور مضبوط، زیادہ لچکدار اور زیادہ پائیدار ابھرے گا۔ آپ کی لگن اور حمایت کے لیے آپ سب کا شکریہ۔ ہم مل کر پاکستان کے روشن مستقبل کی راہ روشن کر رہے ہیں۔اس موقع پرسی پیک کے سابق پراجیکٹ ڈائریکٹر اور انرجی چائنہ پاکستان کے سینئرمشیر ڈاکٹر حسان دائود بٹ اورسکھی ہائیڈرو پراجیکٹ کے ڈائریکٹر ایڈمنسٹریشن ایلن کن بھی موجود تھے