Official Web

ہربل پودوں کے تحفظ کے لئے چین کا جامع نقطہ نظر پاکستان کے لئے مفید

چترال : پاکستان ہربل پودوں کے تحفظ کے حوالے سے چین کے جامع نقطہ نظر سے سیکھ سکتا ہے جس میں روایتی علم، پائیدار طریقوں اور مشترکہ تحقیق کو یکجا کیا گیا ہے۔ ملکی دانش مندی کو سائنسی ترقی کے ساتھ ملا کر دونوں ممالک ان قیمتی وسائل کے تحفظ کے لیے عالمی کوششوں میں اپنا حصہ ڈال سکتے ہیں۔

"بڑے پیمانے پر جنگلات کی بحالی میں چین کی کامیابیاں پودوں کے تحفظ کی عالمی کوششوں کے لئے قابل قدر بصیرت فراہم کرتی ہیں۔ پاکستانی فاریسٹر اور ماحولیاتی نظام کی بحالی اور حیاتیاتی تنوع کے ماہر اعجاز احمد نے کہا کہ اس کامیابی میں اہم کردار ادا کرنے والے عوامل میں حکومت کا مضبوط عزم، ماحولیاتی ریڈ لائن نقطہ نظر، کمیونٹی کی شمولیت، جنگلات کی بحالی کی جدید تکنیک، طویل مدتی نگرانی اور بین الاقوامی تعاون شامل ہیں۔

انہوں نے کہا کہ نایاب پہاڑی پودوں کے بیج جمع کرنا ان کی بحالی اور بقا کے لئے انتہائی ضروری ہے۔ حیاتیاتی تنوع کے تحفظ میں بنیادی کام ان قیمتی بیجوں کی حفاظت کرنا ہے۔ اس کام کے لئے صبر اور محنت کی ضرورت ہوتی ہے، لیکن انعامات لامحدود ہیں.

احمد نے پاکستان کے چترال کے علاقے ہندوکش میں گلیشیئر وں کے پسپا ہونے کے مسئلے کو حل کرنے کے لئے فوری اقدامات کی ضرورت کا بھی ذکر کیا۔  پودوں، جانوروں اور نشیبی علاقوں کی برادریاں بقا کے لیے ان ماحولیاتی نظاموں پر انحصار کرتی ہیں۔ اب وقت آگیا ہے کہ اس اہم ماحولیاتی نظام کی حفاظت کے لئے گلیشیئر کی پسپائی کو کم کرنے کے اقدامات کو ترجیح دی جائے۔

انہوں نے کہا حیاتیاتی تنوع کو برقرار رکھنے، پائیدار استعمال کو فروغ دینے اور روایتی علم کے تحفظ کے لئے ادویاتی پودوں کا تحفظ بہت ضروری ہے۔ پاکستان اور چین دونوں میں جڑی بوٹیوں کی شاندار روایات ہیں اور پاکستان چینی طریقوں سے قیمتی سبق سیکھ سکتا ہے۔

پاکستان میں ملکی برادریاں ہربل پودوں کے تحفظ میں اہم کردار ادا کرتی ہیں۔ ان کی حکمت عملی، جن کی جڑیں اکثر رسومات، عقائد اور ممنوعات پر مبنی ہوتی ہیں، غیر ارادی طور پر پودوں کے تحفظ میں کردار ادا کرتی ہیں۔ اسی طرح، چینی روایتی ادویات (ٹی سی ایم) ادویاتی پودوں کے استعمال کی ایک طویل تاریخ ہے. انہوں نے زور دے کر کہا کہ چین کے فطری علم سے سیکھنے سے پاکستان کو اپنی تحفظ کی کوششوں کو بڑھانے میں مدد مل سکتی ہے۔

خاص طور پر دیہی علاقوں میں ہربل پودوں کو جمع کرنے سے جمع کرنے والوں، خاص طور پر خواتین کو اضافی آمدنی مل سکتی ہے۔ پائیدار کٹائی یا کاشت کاری کے طریقوں سے ان پودوں کے تحفظ کو یقینی بناتے ہوئے غربت کے خاتمے میں مدد مل سکتی ہے۔ پائیدار کٹائی اور کاشت کاری میں چین کا تجربہ پاکستان کو تحفظ کے اہداف کے ساتھ معاشی فوائد کو متوازن کرنے میں رہنمائی کرسکتا ہے۔

جینیاتی استحکام، مادی بنیاد، تاثیر، اور ہربل پودوں کی حفاظت پر مشترکہ تحقیق قیمتی بصیرت حاصل کر سکتی ہے. خلا سے حاصل ہونے والے بیجوں (مثال کے طور پر پاکستان کے خلا میں بھیجے جانے والے ادویاتی بیج) کا زمین پر موجود اپنے ہم منصبوں سے موازنہ کرنے سے نئے طبی مواد کی دریافت ہو سکتی ہے۔

پاکستان میں مختلف قسم کے ماحولیاتی زونز موجود ہیں جن میں سب ٹروپیکل انڈس ڈیلٹا سے لے کر کے ٹو جیسے بلند پہاڑوں تک 8611 میٹر کی بلندی ہے۔ یہ تنوع 3,000 سے زائد ادویاتی پودوں کی اقسام کے لئے قابل استعمال زندہ پودے فراہم کرتا ہے ، جو ملک میں پائے جانے والے کل پھولوں کے پودوں کا تقریبا 50 فیصد ہے۔

آب و ہوا کی تبدیلی پاکستان سمیت ادویاتی پودوں کے لئے اہم چیلنجز ہیں۔ اس قیمتی وسائل کی پائیدار ترقی اور موثر انتظام کے لئے ادویاتی پودوں پر آب و ہوا کی تبدیلی کے اثرات سے نمٹنا ضروری ہے۔